خبرنامہ نمبر1928/2022
کوئٹہ 12مئی۔چیف سیکرٹری بلوچستان عبدالعزیز عقیلی کی زیر صدارت پیرکوہ ضلع ڈیرہ بگٹی میں ہیضے کی وباءاور اس کی تدارک کے حوالے سے اجلاس منعقد ہوا جس میں اب تک صوبائی حکومت کی جانب سے اقدامات اٹھائے گئے اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں سیکرٹری پی ایچ ای صالح بلوچ، ڈائریکٹر جنرل صحت محمد نور قاضی جبکہ کمشنر سبی ڈویژن بالاچ عزیز، ڈپٹی کمشنر ڈیرہ بگٹی ممتاز کھیتران، پی پی ایل، او جی ڈی سی ایل کے نمائندوں نے بذریعہ وڈیو لنک شریک تھے۔ چیف سیکرٹری نے کہا کہ صوبائی حکومت ہیضے کی وباءپر فوری طور قابو پانے کے لیے اقدامات کررہی ہے۔ انہوں نے ضلعی انتظامیہ کو ہدایت کی کہ اس سلسلے میں کسی قسم کی بھی لاپرواہی نہیں ہونی چاہیے۔ ڈپٹی کمشنر نے اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ ضلعی انتظامیہ، محکمہ پبلک ہیلتھ، ایف سی، او جی ڈی سی ایل اور پی پی ایل نے صاف پانی کے 20 سے زائد ٹینکرز علاقے میں بھیجے ہیں جس سے لوگوں کو پینے کی صاف پانی کی فراہمی کو یقینی بنارے ہیں۔ چیف سیکرٹری نے کہا کہ متعلقہ ادارے گرمیوں کی موسم میں علاقے کو پانی کی فراہمی مزید بڑھائیں۔ چیف سیکرٹری نے کہا کہ تحصیل پیرکوہ میں صوبائی حکومت نے کہا کہ ٹیوب ویل لگا کر پیرکوہ کو پانی کی فراہمی کا منصوبہ پر کام ہورہا ہے جس سے جلد علاقے کو پانی کی فراہمی شروع کر دیا جائے گا اور اس منصوبے سے علاقے کے لیے صاف پانی کی فراہمی کا مستقل انتظام ہوسکے گا۔ انہوں نے سیکرٹری پی ایچ ای اور ڈی جی ہیلتھ کو فوری طور پیرکوہ کا دورہ کرنے کی ہدایت کی جہاں پر وہ انتظامات کی نگرانی کریں گے۔ انہوں نے علاقے میں ادویات کی فوری طور فراہمی کی بھی ہدایت کی۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1929/2022
کوئٹہ 12مئی۔ترجمان حکومت بلوچستان فرح عظیم شاہ نے نرسوں کے عالمی دن کے موقع پر اپنے پیغام میں کہا ہے کہ شعبہ صحت میں سب سے اہم کردار صرف ڈاکٹرز کا ہی سمجھا جاتاہے مگر دیگر طبی عملہ بھی انسانیت کی خدمت پر مامور ہوتا ہے جس میں نرسوں کی اہمیت سے کسی طور انکار نہیں کیا جاسکتاہسپتالوں میں دن رات مریضوں کی دیکھ بھال، تیمارداری کرنے میں ایک نرس بھی انتہائی اہم کردار ادا کرتی ہے۔آج معاشرے میں نرسوں کی اہمیت کو اجاگر کرنے اور انکی گرانقدر خدمات کے اعتراف کا دن ہے نرسنگ ایک قابل احترام پیشہ ہے ترجمان حکومت بلوچستان نے کہا کہ صحت کے نظام میں نرسنگ کا شعبہ ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے اورنرسنگ انسانیت کی بے لوث خدمت کا دوسرا نام ہے صوبائی حکومت نرسوں کی خدمات اور قربانیوں کو انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے آج کے دن میں نرسوں کو ان کے جذبہ خدمت کےلئے سلام پیش کرتی ہوں،  صوبائی حکومت نرسوں کی فلاح و بہبود کے اقدامات کا سلسلہ جاری رکھے گی،
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1930/2022
کوئٹہ 12مئی۔صوبائی وزیر منصوبہ بندی و ترقیات نورمحمددمڑ نے منصوبہ بندی و ترقیات کے تمام انتظامی افسران پر واضح کردیا ہے کہ ترقیاتی منصوبوں کی تکمیل کے سلسلے میں مقررکردہ ڈیڈ لائنز میں ایک دن کی بھی تاخیر برداشت نہیں کی جائے گی لہٰذا محکمے کے افسران اپنے اپنے سیکشن کے مقررہ ڈیڈ لائنز کے مطابق ترقیاتی منصوبوں کی تکمیل اور مالی سال کے آخر تک جاری شدہ فنڈز کے سو فیصد استعمال کو یقینی بنانے پر خصوصی توجہ دیں۔ مالی سال کے آخر تک جاری شدہ فنڈ لیپس ہونے کی صورت میں متعلقہ آفیسر ذمہ دار ہوگا۔ انہوں نے مزید ہدایت کی ہے کہ محکموں کے آفیسران اگلے مالی سال کے ترقیاتی پروگرام کی تیاری پر بھی خصوصی توجہ دیں اور اس سلسلے میں محکمہ منصوبہ بندی کے اجلاسوں میں اپنی شرکت کو یقینی بنائیں۔ اگلے سالانہ ترقیاتی پروگرام میں جاری منصوبوں کی تکمیل کو ترجیح دی جائے جبکہ ضرورت کی بنیاد پر ایسے نئے منصوبے بھی نئے سالانہ ترقیاتی پروگرام میں شامل کئے جائیں جن سے زیادہ سے زیادہ لوگ مستفید ہوسکیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کے روز ترقیاتی منصوبوں پر پیشرفت کا جائزہ لینے کے موقع پر کیا۔ سینئر صوبائی وزیر منصوبہ بندی و ترقیات نے بعض ترقیاتی منصوبوں پر عملدرآمد کی رفتار پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے متعلقہ آفیسر کو ان منصوبوں پر آنے والے دنوں میں ٹھوس اور تسلی بخش پیشرفت یقینی بنانے کی ہدایت کی کہ پندرہ دنوں میں ان منصوبوں پر پیشرفت کا جائزہ لینے کے لئے دوبارہ اجلاس بلایا جائے گا اور ان منصوبوں پر متعلقہ محکمے کا آفیسران ان منصوبوں پر پیشرفت سے آگاہ کریں۔ وزیر منصوبہ بندی و ترقیات کا مزید کہنا تھا کہ رواں ماہ کے آخر میں ترقیاتی منصوبوں کے لئے جاری کردہ فنڈز کے استعمال کا جائزہ لینے کے لئے بھی ایک خصوصی اجلاس منعقد کیا جائے گا اور فنڈز استعمال نہ ہونے کی صورت میں متعلقہ آفیسران سے باز پرس کی جائے گی اور بغیر کسی ٹھوس وجہ کے فنڈز استعمال نہ ہونے کی صورت میں متعلقہ آفیسران کے خلاف کاروائی بھی عمل میں لائی جائے گی۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1931/2022
کوئٹہ۔ 12 مئی ۔پارلیمانی سیکرٹری قانون و پارلیمانی امور ڈاکٹر ربابہ خان بلیدی نے کہا ہے کہ پاکستان میں نرسنگ کے حوالے سے قانون سازی پر کام جاری ہے بین القوامی سطح پر پوری دنیا میں صحت کے شعبے پر توجہ دی جارہی ہے جس کے تناظر میں ہمیں بھی نرسنگ کے تعلیمی اداروں کو ترقی اور جدت سے ہم آہنگ کرنا ہوگا  اس وقت پاکستان میں 62 ہزار 651 نرسز کام کر رہی ہیں اس تناسب سے  بلحاظ آبادی ہر 10 ہزار آبادی پر صرف 5 نرسز دستیاب ہیں  پاکستان میں تقریباً 162 مراکز نرسز کی بنیادی تعلیم فراہم کر رہے ہیں جس میں سالانہ 2 ہزار نرسز تربیت لے کر طبی خدمات کی انجام دہی کے لئے میدان عمل میں آتی ہیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے نرسنگ کے عالمی دن کے موقع پر اپنے ایک پیغام میں کیا ڈاکٹر ربابہ خان بلیدی نے کہاکہ بلوچستان سمیت ملک بھر اور پوری دنیا میں نرسوں کی قلت آج بھی موجود ہے اس وقت دنیا میں ہر ایک ہزار آبادی پر صرف 3 نرسز یا مڈوائفس دستیاب ہیں جو کہ ایک قلیل تعداد ہے دنیا کے طبی نظام کو مکمل فعال کرنے کے لئے مزید 59 لاکھ نرسز درکار ہیں انہوں نے کہا کہ پاکستان نرسنگ کونسل کے تحت ملک میں  کئی ڈپلوما اپرنٹس شپ پروگرام اور ماسٹرز ڈگریاں دستیاب ہیں جہاں سے جنرل نرسری، پیوپل مڈوائفری اور نرس وائفری میں ڈپلوما کورس کے ساتھ پوسٹ آر این، بی ایس این اور نرسنگ میں بی ایس سی ،  ایم ایس سی، ڈاکٹریٹ کی اسناد اور کئی دیگر اسپیشل خدمات میں تربیت حاصل کی جاسکتی ہے  عالمی ادارہ صحت کے ملینیم اہداف میں فلپائن جیسے ملک کی کامیابیاں قابل تقلید ہیں جس نے امریکا، کینیڈا اور برطانیہ جیسے ممالک میں نرسنگ کے شعبے میں اپنے عوام کو روزگار کے وسیع مواقع مہیا کیے ہیں۔ اس ماڈل سے فائدہ اٹھاتے ہوئے کوئی بھی ملک نہ صرف مقامی سطح پر نرسوں کی کمی کو دور کرسکتا ہے بلکہ گلوبل نرسنگ میں بھی باعزت مقام پا سکتا ہے انہوں نے کہا کورونا وباء کے دوران پاکستان میں مجموعی طور پر  115 نرسیں جان کی بازی ہار گئیں تاہم پھر بھی قوم کی ان عظیم بیٹیوں نے ہمت نہیں ہاری اور اپنی مستقل مزاجی اور بلند حوصلے سے یہ بات ثابت کردی کہ پاکستانی نرسسز ہر وقت اور ہر دم قوم کی خدمت کو تیار ہیں کٹھن سے کٹھن حالات میں بھی انہوں  نے کبھی اپنی ڈیوٹی سرانجام دینے سے انکار نہیں کیا ڈاکٹر ربابہ خان بلیدی نے کہا کہ آج کے دن کی مناسبت سے جذبہ انسانیت سے سرشار زخموں اور زخمیوں کی مسیحائی کرنے والی نرسوں کو بھر پور خراج تحسین پیش کرتے ہیں
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1932/2022
گودار12مئی۔ریجنل الیکشن کمشنر مکران بمقام کیچ محمد عمران نے کہا ہے کہ بلدیاتی انتخابات کا پر امن اور شفاف انعقاد اور نچلی سطح تک اختیارات کی منتقلی حقیقی جمہوریت کے حصول کی طرف اہم پیش رفت ہے۔ اس کے لئے میڈیا سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز کو اپنا بھر پور کردار ادا کرنا چاہئے تاکہ ٹرن آو¿ٹ زیادہ سے زیادہ ھوسکے ان اخیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کے روز بلدیاتی انتخابات سے متعلق میڈیا ورکشاپ سے خطاب کرتے ہوئے کیا ورکشاپ میں میڈیا پرسن سمیت دیگر تمام اسٹیک ہولڈرز نے شرکت کی انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن بلدیاتی انتخابات کے عمل کو پر امن اور شفاف بنانے کیلئے تمام ضروری اقدامات کیے ھوئے ہیں نچلی سطح پر عملدرآمد کے نمائندوں کے انتخابات اور ا±نہیں اختیارات کی منتقلی میں سنجیدہ اور پر عزم ہیں ورکشاپ سے مقررین نے کہا ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے بلوچستان میں 29 مئی 2022 کو ہونے والے بلدیاتی انتخابات سمیت انتخابی فہرستوں کی نظر ثانی اور اپڈیشن کے جاری کام اور عام انتخابات کے لئے عوامی آگاہی کے سلسلے میں مختلف اضلاع میں خصوصی میڈیا ورکشاپ کا انعقاد کیا جا رہا ہے تاکہ عوام کو بلدیاتی انتخابات اور ووٹرز لسٹوں کی اپڈیشن سمیت عام انتخابات سے متعلق آگاہی دی جاسکے اور ووٹ ٹرن آوٹ بڑھایا جا سکے اور عوام میں انتخابی امور سے متعلق شعور و آگاہی پھیلائی جا سکے۔ گوادر میں ایک میڈیا ورکشاپ اسی سلسلے کی کڑی ھے میڈیا ورکشاپ سے ریجنل الیکشن کمشنر مکران عمران احمد سمیت، ڈسٹرکٹ الیکشن کمشنر گوادر محمد سمیع اللہ، الیکشن کمیشن کے پی ار او غوث بخش اور گوادر پریس کلب کے صدر سلیمان ہاشم نے بھی خطاب کیا۔ ورکشاپ میں پولنگ کے عمل اور ووٹنگ اندرراج کے متعلق خصوصی طور زور دیا گیا
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1933/2022
زیارت 12 مئی ۔ڈپٹی ڈائریکٹر زراعت توسیعی حاجی نذیر احمد پانیزئی کی زیر صدارت محکمہ زراعت کے افسران کا ماہانہ جائزہ اجلاس منعقد ہوا اجلاس میں کثیر تعداد میں افسران اور اہلکاران نے شرکت کی۔اجلاس سے ڈپٹی ڈائریکٹر توسیعی حاجی نذیر احمد پانیزئی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ زراعت کو جدید خطوط پر استوار کریں گے محکمہ زراعت کے افسران و اہلکاران محکمہ کو مزید فعال بنانے کے لیے مزید بہتر کام کریں۔انہوں نے کہا صوبائی وزیر زراعت اسد بلوچ ،سیکرٹری امید علی اور ڈی جی علی رضا جمالی کی خصوصی ہدایت کی روشنی میں زمینداروں کے تمام جائز مسائل کے حل کے لیے بھرپور کردار ادا کریں گے ہم زمینداروں کو خوشحال دیکھنا چاہتے ہیں اس سلسلے میں جو زمیندار محکمے کے ساتھ رجسٹرڈ تھے ان کو رواں ہفتے مفت ادویات دی جائے گی،انہوں نے کہا کہ فیلڈ سٹاف کو سخت ہدایت کی ہے کہ جو زمیندار رجسٹرڈ نہیں ہے ان کی جلد رجسٹریشن کروائیے،سرکاری موٹر سائیکل کی ماہانہ قسط وقت پر جمع کرنی چاہیے انہوں نے کہا کہ ضلع زیارت کے تمام علاقوں میں فیلڈ ڈے جلد جاری ہے،زمینداروں اروں سے رابطے بہت ضروری ہے زمینداروں سے مل کر کام کریں گے۔

﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1934/2022
خضدار 12مئی۔خضدار رکن بلوچستان اسمبلی میر یونس عزیز زہری کی وائس چانسلر بلوچستان یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنا لوجی خضدار ڈاکٹر احسان اللہ خان کاکڑ سے ان کے آفس میں ملاقات۔ ملاقات میں خضدار انجینئرنگ یونیورسٹی کی تعمیر وتر قی نئے تعلیمی اقدامات کے بارے میں گفت و شنید ہوئی۔ وائس چانسلر بلوچستان یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنا لوجی خضدار ڈاکٹر احسان اللہ خان کاکڑ نے بتایا کہ جامعہ میں قابل ستائش اقدامات ہم نے عمل میں لائے ہیں جس میں سرٹیفکیٹ پروگرامز نیشنل فری لانسنگ پروگرام، سافٹ وئیر ہاو¿س کا قیام ڈی جی اسکلز، نیو ایڈمن بلاک کی تکمیل گرلز ہاسٹل،اکیڈمک بلاک،الیکٹریکل انجینئرنگ ڈیپارٹمنٹس میں پی ایچ ڈی کی منظوری، طلباءکی تعدادمیں دوگنے سے بھی زیادہ کا اضافہ سمیت دیگر بہت سارے پروگرامز کا اضافہ کیا گیا ہے۔ میں ان اقدامات میں حکومتی ٹیم و اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کا بھی بے حد مشکور ہوں کہ جنہوں نے ہمیشہ میرے ساتھ تعاون کیا اور میری حوصلہ افزئی کی جب کہ خضدار انجینئرنگ یونیورسٹی کے اسٹاف نے بھی بہت زیادہ میر ے ساتھ دیا مذید بھی ہم کوشش کررہے ہیں کہ اس طرح کے اقدامات کو آگے بڑھائیں جامعہ ہذا میں نت نئے تعمیراتی و تعلیمی ترقی کے پروگرامز تشکیل دیں۔ اس موقع پر رکن بلوچستان اسمبلی میر یونس عزیز زہری نے گفتگو کرتے ہوئے خضدار انجینئرنگ یونیورسٹی کو نہ جھالاوان بلکہ پورے بلوچستان کے لئے ایک تعلیمی پہچان قرا دیدیا ان کا کہنا تھاکہ یقینا یہ ہمارے لئے فخر کی بات ہے کہ خضدار میں ایک ایسا تیکنیکی جامعہ کی صورت میں پلیٹ فارم قائم ہے کہ جس سے پورے صوبے کے نوجوان فائدہ اٹھا رہے ہیں اس جامعہ سے میں خود بھی انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کرچکا ہوں اور میر بھی یادیں اس جامعہ سے وابستہ ہیں۔ میر یونس عزیز زہری نے وائس چانسلر خضدار انجینئرنگ یونیورسٹی ڈاکٹر احسان اللہ خان کاکڑ اور جامعہ کی تمام انتظامیہ کے قابل ستائش اقدامات کو سراہا اورکہاکہ آپ کی محنت اطمینان بخش ہے جامعہ میں اتنے زیادہ اقدامات سے یقینا جامعہ ترقی کرچکی ہے اور آنے والے دنوں میں ہم اور آپ مل کر مذید جامعہ کی ترقی کے لئے اقدامات کریں گے اور مشترکہ کاوشیں آگے بڑھائیں گے۔ ملاقات میں غلام علی بادشاہ رئیس محمد اکبر گنگو حافظ جمیل و دیگر شامل تھے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1935/2022
کوئٹہ12 مئی صوبائی سیکریٹری مواصلات و تعمیرات روشن علی شیخ کی زیر صدارت محکمہ مواصلات کے ترقیاتی منصوبوں پر پیشرفت سے متعلق جائزہ اجلاس منعقد ہوا اجلاس میں ضلع قلعہ عبداللہ چمن پشین لورلائی آواران اور بارکھان کے متعلقہ تمام انجینئرز آفیسران نے شرکت کی اجلاس میں سالانہ ترقیاتی پروگرام2021-22 میں شامل منصوبوں پر پیش رفت پر تفصیلی جائزہ لیا گیا اجلاس میں متعلقہ اضلاع کے آفیسران نے ترقیاتی منصوبوں پر جاری کام کی رفتار اور معیار سے متعلق آگاہ کیا گیا اس موقع پر صوبائی سیکریٹری مواصلات روشن علی شیخ نے جاری ترقیاتی منصوبوں پر کام کی رفتار کو مزید تیز کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ متعلقہ منصوبوں کو جلد از جلد مکمل کیا جائے تاکہ ان اضلاع کے عوام ان منصوبوں کے ثمرات سے مستفید ہونے کے ساتھ ساتھ ترقی کے عمل کو آگے بڑھایا جائے انہوں نے متعلقہ انجینئرز کو ہدایت کی کہ ایسی اسکیمات جن میں کوئی مشکلات پیش آرہی ہوں انہیں مکمل کرنے کے لیے ضلعی انتظامیہ سے بھرپور مدد لی جائے اور سیکریٹری آفس کو بھی آگاہ کیا جاے تاکہ ایک مربوط لائحہ عمل کے تحت منصوبہ جات کو مکمل کیا جائے صوبائی سیکریٹری مواصلات نے مزید کہا کہ جاری ترقیاتی منصوبوں پر تسلی بخش کام نہ ہونے کی صورت میں کنٹریکٹرز کے خلاف فوری طور پر قانون کے مطابق کاروائی عمل میں لائی جائے انہوں نے کہا کہ صوبے بھر میں بنیادی ڈھانچے کی بہتری کیلئے مو¿ثر اقدامات کئے جائیں کیونکہ موثر اور مضبوط مواصلاتی نظام ہی بلوچستان کی ترقی کا ضامن ہے۔

﴾﴿﴾﴿﴾﴿
پریس ریلیز
گوادر 12مئی ؛۔گوادر میں ماس ہیومین ریسورسز سروس کے زیر اہتمام پاکستان انرجی کانفرنس کا انعقاد ہوا ۔ کانفرنس کے آرگنائزر چودھری مریم صبا تھے کانفرنس سے پاک نیوی کے رئیر ایڈمرل کمانڈر جواد احمد،ڈپٹی کمشنر گوادر (ر) کپٹن جمیل احمد بلوچ، چائنا اور سیز پورٹ کپمنی کے چیرمین ،زونگ باﺅ ڑنگ، ڈائریکٹر گوادر ڈیولپمنٹ اتھارٹی میر مجیب الرحمٰن قمبرانی، ماس ہیومین ریسورس سروس کے چیرمین چودھری مریم صبا، چیرمین نیپرا توصیف احمد، انجمن تاجران گوادر کے نائب صدر حمید ہنڈا، اور زیڈ بی انٹر پرائز کے ایم ڈی میر عثمان کلمتی و دیگر مقررین نے خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ گوادرکی بڑی اہمیت ہے۔ انوسٹر اور سیاحوں کی آمد سے گوادر مزید ترقی کرے گا۔ان کا کہنا تھا کہ گوادر سیاحوں اور انوسٹرز کے لئے بڑی پر کشش جگہ ہے۔ اس طرح کی ایونٹس کے انعقاد سے انوسٹرزاور سیاحوں کو بہت سے معلومات میسر ہونگی گوادر کی ترقی و تعمیر سے پاکستان ترقی کرے گا انہوں نے کہا کہ اورماڑہ سے لیکر جیوانی تک سیکورٹی کا کوئی مسئلہ نہیں۔ چائینا حکومت اور پاکستان گوادر کی ترقی و گوادر کے عوام کی خوشحالی چاہتی ہیں۔ کانفرنس سے مقررین نے کہا کہ چائنیز گوادر کو اپنا دوسرا گھر سمجھتے ہیںگوادر کی ترقی کے لئے بجلی کی بڑی اہمیت ہے۔ اس کے بغیر یہاں انڈسٹری کے لئیے مشکلات درپیش ہونگی۔انہوں نے کہا کہ گوادر کی لوکل کمیونٹی سے چائینوں کے برادرانہ تعلقات ہیں گوادر کا مستقبل شاندار ہے۔ یہاں ائل ریفائنری بنے گی کئی کمپنیاں اس منصوبے میں دلچسپی لے رہی ہیں مقررین نے کہاکہ کسی علاقے کی ترقی کے لئے پانی و بجلی کی بڑی اہمیت ہے۔گوادر میں بجلی ایران سے آ رہی ہے جو بہت ہی کم مقدار میں ہے گوادر کو جلد نیشنل گرڈ سے منسلک کرنا ہوگا۔ پہلے کہا جا رہا تھا کہ ایران کے سرحدی علاقہ 250سے 100 میگاواٹ بجلی آنے کا امکان تھا لیکن یہ ابھی التوا کا شکار ہے۔ انہوں نے کہا کہ بجلی گیس اور پانی کے بغیر ترقی ممکن نہیں ہے۔ پچھلے سال بارشیں نہ ہونے سے روزانہ گوادر میں اربوں روپے خرچ ہوئے اب ہمارے پاس سوڈ ڈیم شادی کور ڈیم اور انکاڑہ ڈیم میں وافر مقدار میں پانی ہے۔ گوادر کی پرانی آبادی میں سیوریج اور ڈرینج سسٹم نئی سڑکیں تعمیر کرنے اور لیڈیز مارکیٹ اور شاہی بازار گوادر جماعت خانہ اس کے قدیم قلعے کی جدید تعمیر سے گوادر ایک پر کشش شہر کا منظرپیش کرے گا۔ یہاں کے نوجوانوں کے لیے کھیل کے میدان، ماہی گیروں کے لئے جدید مشینری سے بوٹ سازی سے ایک نئی انقلاب آئے گا۔ ایکسپریس وے کے قریب آ بادی کو دیگر محفوظ مقام شفٹ کرنے ان کے روزگار کو محفوظ کرنے۔ گوادر کو ٹورزم کے لئے اس کو خوبصورتی دینے کے لئے کئی منصوبے ہیں اس کا اولڈ سٹی کو ماڈل ویلیج کی شکل دینے کے لئے ہماری کوشش جاری ہیں گوادر کے مضافاتی شہر پشکان اور سر بندر بھی پر کشش علاقے ہیں۔انہوں نے کہا کہ گوادر آ ئندہ چند سالوں میں ایک خوبصورت شہر کا روپ دھارے گا۔ مقررین نے کہا کہ کراچی سے اورماڑہ پسنی اور گوادر میں سیاحوں کے ٹورزم کے لئے ساحلی علاقوں کو بھی ترقی اور پر کشش بنانے کی ضرورت ہے۔ اس کانفرنس سے دیگر مقررین میں شعیب احمد، وقاص احمد، انجمن تاجران گوادر کے نائب صدر عبدالحمید عبدالرشید, پاکستان بزنس گروپ کے چیرمین فراز احمد، نیپرا کے چیرمین توسف احمد نے اسلام اباد سے ان لائین خطاب کیا۔ مقررین نے مریم صباچودھری کی کاوشوں کی بے حد تعریف کی گئی کہ انہوں نے اتنی بڑی سیمینار کا انعقاد کرا کر گوادر میں انرجی کی کمی پر جو تحفظات کا اظہار کیا ہے اس موقع پر کمشنر مکران شبیر احمد مینگل، سندھ بلوچستان انٹرنیشنل بزنس فورم کے نمائندے اور عمائدین شہر بھی موجود تھے حکومت وقت کو چائیے کہ گوادر میں گیس اور بجلی کی ضروریات کو جلد پورا کرے۔ اس کے بغیر ترقی ایک خواب ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Post comment