خبرنامہ نمبر 1459/2019
کوئٹہ 21اپریل:۔وزیراعظم عمران خان مختصر دورے پر کوئٹہ پہنچے گورنر بلوچستان جسٹس ریٹائرڈ امان اللہ خان یاسین زئی اور وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے ایئرپورٹ پر ان کا استقبال کیا، بعدازاں وزیراعظم نے آئی ٹی یونیورسٹی میں منعقدہ تقریب میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا سنگ بنیاد رکھا، وزیراعظم نے قبل ازیں ہزارہ برادری کے عمائدین سے بھی ملاقات کی اور سانحہ ہزار گنجی کے شہداء کے لواحقین کے لئے فاتحہ خوانی کی، مختصر دورے کے بعد وزیراعظم ایران روانہ ہوگئے، گورنر اور وزیراعلیٰ نے انہیں رخصت کیا۔ 
()()()
خبرنامہ نمبر 1460/2019
کوئٹہ 21اپریل:۔وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے کہا ہے کہ ماضی کے حکمرانوں نے مسائل کے حل کے حوالے سے عوام کوخوش کرنے کے لئے عارضی بنیادوں پر اقدامات کئے، اصل حکمران وہ ہوتے ہیں جو نظام کی بہتری کے لئے کام کرتے ہوئے آئندہ کی منصوبہ بندی بھی کرتے ہیں۔ عوام کو موجودہ وفاقی اور صوبائی حکومت سے بہت سی توقعات وابستہ ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے ہمیں ملک اور صوبے کے دیرینہ مسائل کے حل کا موقع دیا ہے جس سے ہم بھرپور فائدہ اٹھائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کے تحت کوئٹہ، گوادر، پسنی اور اورماڑہ میں اپارٹمنٹس اور مکانات کی تعمیر کے منصوبے کا سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ تقریب کے مہمان خصوصی وزیراعظم عمران خان تھے۔ گورنر بلوچستان جسٹس ریٹائرڈ امان اللہ خان یاسین زئی، وفاقی وصوبائی وزراء، اراکین صوبائی اسمبلی، قومی وصوبائی اسمبلی کے ڈپٹی اسپیکرز، چیف سیکریٹری بلوچستان، وفاقی وصوبائی محکموں کے سیکریٹری، سیاسی وقبائلی عمائدین اور طلباء کی بہت بڑی تعداد تقریب میں موجود تھی، وزیراعلیٰ کی درخواست پر دہشت گردی کے حالیہ واقعات کے شہداء کے غم میں ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی گئی۔ وزیراعلیٰ نے اپنے خطاب میں مزید کہا کہ ماضی میں جوبھی خامیاں رہیں ہم بھی اس کا حصہ رہے ہیں تاہم اب نظام کی بہتری کے لئے ہماری کوششیں اور اقدامات سب کے سامنے ہیں، ہم نے مالی وانتظامی معاملات اور ملکی وقار کو بہتر بنانا اور تعلیم کو مضبوط کرنا ہے جس کے لئے نئی نسل کو ایک موثر پلیٹ فارم مہیا کیا جارہا ہے، وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہمیں خدا پر مکمل بھروسہ ہے، بے شک ہمیں بہت سی مشکلات کے سامنا ہے جو اس وجہ سے ہیں کہ گذشتہ چالیس سال میں نظام کی بہتری کی جانب توجہ نہیں دی گئی، نظام کی بہتری کے لئے ہماری محنت ضرور کامیاب ہوگی، ہم کمزور نہیں او ر ہماری نیت صاف ہے، انہوں نے کہا کہ عوام کی اکثریت کے پاس روزگارنہیں اور نہ ہی وہ اس قابل ہیں کہ اپنی چھت بناسکیں، سرکاری ملازمین بھی اپنا گھر بنانے کی سکت نہیں رکھتے، ایسے تمام لوگوں کے لئے نیا پاکستان ہاؤسنگ پروگرام ایک انقلابی تبدیلی لے کر آئے گا جس سے نہ صرف لوگوں کو اپنی ذاتی رہائش ملے گی بلکہ ہاؤسنگ کے شعبہ سے تعلق رکھنے والی صنعتوں کے فروغ سے معاشی سرگرمیاں شروع ہوں گی اور لوگوں کو روزگار ملے گا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہم وزیراعظم کے شکر گزار ہیں کہ انہوں نے نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کے میگا پروجیکٹ کا آغاز بلوچستان سے کیا جس کے تحت بلوچستان میں ایک لاکھ سے زائد کم لاگت کے مکانات تعمیر ہوں گے، انہوں نے کہا کہ سی پیک کا مغربی روٹ، کینسر ہسپتال، کارڈک سینٹر، بلوچستان کی ترقی کی جانب وزیراعظم کی خصوصی دلچسپی کا بہت واضح پیغام ہے، کارڈک سینٹر اور کینسر ہسپتال میں پاک فوج بھی ہمارے ساتھ شریک ہے، انہوں نے کہا کہ بیوٹمز میں زیر تعلیم طلباء ہمارا مستقبل ہیں، جنہیں صرف بیانات کے ذریعہ الجھایا نہیں جاسکتا، ہماری نوجوان نسل معلومات رکھتی ہے اور ٹیکنالوجی سے آراستہ ہے اور وہ نظام کی بہتری کے لئے ہمارے اقدامات کو دیکھ رہی ہے، ملک اور صوبے کے مفاد میں اقدامات کا طلباء خیرمقدم کریں گے، انہوں نے طلباء سے مخاطب ہوتے ہوئے ان پر زور دیا کہ وہ اس جانب قدم بڑھائیں جو ملک، صوبے اور ان کے اپنے مستقبل کے لئے بہتر ہو، وزیراعلیٰ نے کہا کہ وہ وزیراعظم کا شکریہ ادا کرتے ہیں جنہوں نے اس تقریب کے بیوٹمز میں انعقاد کی ہماری تجویز قبول کی، کیونکہ اگر یہ تقریب گورنر ہاؤس یا وزیراعلیٰ سیکریٹریٹ میں ہوتی تو عام لوگوں اور طلباء کا وہاں داخلہ مشکل ہوتا، تقریب کے یہاں انعقاد سے وزیراعظم اور ہمیں اپنے مستقبل کے معماروں سے براہ راست مخاطب ہونے کا موقع ملا ہے، اس موقع پر تقریب میں موجود طلباء اور طالبات کی جانب سے وزیراعظم، وزیراعلیٰ اور وفاقی وزیر ہاؤسنگ کے خطاب کو بھرپور پذیرائی ملی۔
()()()
خبرنامہ نمبر1461/2019 
سنجاوی 21اپریل :۔کھیلوں کے میدانوں کو آباد کرنا حکومت کی اولین ترجیح ہے ،نوجوانوں کو کھیلوں کے حوالے سے تمام سہولیات دیں گے ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر پی ایچ ای ،واسا حاجی نورمحمد خان دمڑ نے سنجاوی میں تاج افغان کرکٹ ٹورنامنٹ کی اختتامی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پرڈپٹی کمشنرہرنائی عظیم جان دمڑ ،بی اے پی ہرنائی کے صدر عبدالناصر ایڈوکیٹ ،عبدالستار کاکڑ ،شادی گل ،عبدالباقی ترین ،غلام رسول کاکڑاور دیگر بھی موجود تھے ،صوبائی وزیرکا اس موقع پرشاندار استقبال کیا گیا اور صوبائی وزیر کا دونوں ٹیموں کے کھیلاڑیوں سے تعارف بھی کرایا گیا۔صوبائی وزیر حاجی نورمحمد دمڑ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سنجاوی میں کرکٹ کا بڑا گراونڈ بنائیں گے ،اپنے حلقے کے نوجوانوں کوکھیلوں کے حوالے سے مایوس نہیں کریں گے ،نوجوان نسل قوم کا مستقبل ہے وہ معیاری تعلیم کے ساتھ کھیلوں میں بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیں اور ملک اور قوم کا نام روشن کریں ،نوجوانوں کی ہر فورم پر سرپرستی اور حوصلہ افزا ئی کریں گے ۔انہو ں نے کہا کہ عوام کا خادم ہوں عوام کو جوابدہ ہو ،عوام کے مسائل کے حل کے لیے پارلیمنٹ کے اندر اور باہر ہر فورم پر آواز بلند کررہا ہوں ۔انہوں نے آخر میں کھیلاڑیوں میں انعامات تقسیم کئے اور ٹورنامنٹ کمیٹی کے لیے تین لاکھ روپے اور رنر اور ونر ٹیموں کے لیے بیس بیس ہزار روپے دینے کا اعلان کیا۔
()()()
خبرنامہ نمبر1462/2019 
واشک21 اپریل :۔پی بی ایچ آئی واشک کے زیراہتمام ایک روزہ تربیتی ورکشاپ کا انعقاد بمقام ڈی ایس یو آفس بسیمہ میں منعقد کیا گیا جس میں ضلع واشک کے تمام بی ایچ یوز کے ایل ایچ ویز اور ایف ایم ٹیز نے شرکت کی تربیتی ورکشاپ میں قطر ہسپتال کراچی سے ضلع واشک کے تربیت شدہ ایل ایچ یوز نے متعلقہ ایل ایچ ویز کو ٹریننگ دیتے ہوئے بتایا کہ بیسک ہیلتھ یونٹ میں ایل ایچ ویز اور ایف ایم ٹیز کا اہم کردار ہوتا ہیں جو دیہی علاقوں میں خواتین بالخصوص عاملہ خواتین کو زچگی کے دوران احتیاتی تدابیر کا خصوصی خیال رکھنا ،ان خواتین کو عاملہ ہونے کے دو ران قریبی سینٹر میں متعلقہ ڈاکٹر یا ایل ایچ ویز سے اپنا چیک اپ کرنا لازمی ہیں اس سلسلے میں ان خواتین کو شعور اگائی دینے کی ضرورت ہیں جبکہ ایل ایچ ویز اپنے ذ مہ داری نبھاتے ہوئے تمام لوازمات ایکوومنٹ کا استعمال سمیت صفائی کا خاص خیال رکھتا ہے، مقررہ اوقات میں مریض کا چیک اپ لازمی ہیں اس تربیتی ورکشاپ کا مقصد بھی یہی ہیں کہ کسی بھی انسان کے علاج معالجے کے دوران کوئی کوتائی پیش نہ آئے اور بہتر انداز میں مریضوں کا طبی امداد کیا جاسکیں قطر ہسپتال کراچی میں ریفرشر کورس کا مقصد بھی یہی ہیں کہ ہمارے علم میں اضافہ ہو اور پی پی ایچ آئی بلوچستان کے جانب سے ان ایل ایچ ویز کے لئے لاکھوں روپے اس مد میں خرچ کیے جانے کا مقصد ایل ایچ ویز کے علم میں مزید اضافہ ہو تاکہ وہ اپنے اپنے علاقوں میں مریضوں کو ان کے دہلیز پر صحت کے بنیادی سہولیات کی فراہمی ممکن ہوسکیں تربیتی ورکشاپ ایک اچھا عمل ہیں اس سے مستفید ہونے کی ضرورت ہیں تاکہ دوران علاج جو کمی ہوئی ہیں ان کو کنٹرول کرکے مزید بہتری لانا ہے اس سلسلے میں پی پی ایچ آئی اپنی طرف سے جو ممکن ہوا ہے بی ایچ یوز میں تمام دستیاب وسائل کو بروکار لاہی ہیں تربیتی ورکشاپ کے دوران پی پی ایچ آئی واشک کے ڈسٹرکٹ سپورٹ منیجر سمیع عطا بلوچ نے شرکاء سے خطاب کے دوران کہا کہ ہماری کوشش ہوگی کہ ضلع کے جتنے بھی بی ایچ یوز ہیں ان میں ایل ایچ ویز کی تعیناتی کو یقینی بنایا جائے اور کسی غیر ذمہ دارای یا غفلت کا مظاہرہ کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی بالخصوص غیر حاضری پر کوئی بھی سمجھوتا نہیں ہوگا ایل ایچ ویز ایمانداری سے اپنے خدمات کو سرانجام دے تاکہ کوئی مریض ان سینٹرز سے مایوس نہ لوٹے۔
()()()
خبرنامہ نمبر1463/2019
کوہلو21اپریل :۔صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ خان مری اِن دنوں اپنے حلقے کوہلو کے دورے پر ہیں گزشتہ روز عوام کی بڑی تعداد ان سے ملنے گھر پہنچ گئے جہاں صوبائی وزیر نے لوگوں کے مسائل سننے اور حل کرنے کی یقین دہانی کی ہے بعدازاں سفید کا دورہ کیا اور علاقے کے قبایلی عمائدین و لوگوں سے ملے اس موقع پرگفتگو کرتے ہوئے میر نصیب اللہ مری نے کہا ہے کہ عوام کے مسائل ترجیح بنیادوں پر حل کرنے کے لئے کوشاں ہوں صوبے میں حقیقی معنوں میں تبدیلی کے ثمرات عوام تک پہنچ رہے ہیں ہماری کوشش ہے کہ عوام کو تمام بنیادی سہولیات اُن کے دہلیز پر میسر ہوں کوہلو میں سیلاب متاثرین کے لئے امدادی سامان پہنچ گیا ہے مزید ضرورت ہوا تو متاثرین کی ہر ممکن مدد کریں گے ضلع میں ترقی کے دور کا آغاز ہوچکا ہے جس کے ثمرات عوام تک پہنچ رہے ہیں صوبائی وزیر نے کوہلو عید گاہ اور نیلی روڈ کے کام کو بھی تیز کرنے کی ہدایت کی ہے ۔
()()()

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Post comment