خبرنامہ نمبر3389/2018
کوئٹہ 13دسمبر ۔ گورنر بلوچستان امان اللہ خان یاسین زئی نے کہا ہے کہ دنیا میں اپنا نام اور اپنی پہچان بنانے کیلئے ضروری ہے کہ ہم پل پل بدلتی دنیا کے نئے رجحانات کے مطابق تحقیق پر مبنی علم و ر وشنی کو فروغ دیں کیونکہ زندگی کے ہر شعبہ کی ترقی معیاری تعلیم کے فروغ سے وابستہ ہے ۔ یہ بات انہوں نے بلوچستان یونیورسٹی کے دورے کے موقع پر کہی ۔ بحیثیت چانسلر یہ ان کا پہلا رسمی دورہ تھا ۔ اس موقع پر وائس چانسلربلوچستان یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر جاوید اقبال بھی موجود تھے ۔ بلوچستان یونیورسٹی کے تمام ڈین فیکلٹی چیئرمین ڈیپارٹمنٹ اور پروفیسر حضرات سے بات چیت کرتے ہوئے گورنر بلوچستان نے کہا کہ آپ اپنے علم و تجربے کے مطابق تعلیمی معیار کو مزید بلند کرنے کیلئے اپنی مثبت تجاویز و آراء پیش کرنے میں بھر پور کردار ادا کریں ۔ یونیورسٹی کے اساتذہ کو درپیش مشکلات کے حوالے سے گورنر نے کہا کہ میری خواہش اور کوشش رہی ہے کہ تمام درپیش مشکلات و مسائل کا پائیدار حل ڈھونڈ سکوں ۔ گورنر نے ہدایت کی کہ تعیناتیوں اور پرو موشن میں میرٹ اور شفافیت کا خصوصی خیال رکھا جائے تاکہ قابل اور مستحق لوگ سامنے آئیں ۔ قبل ازیں گورنر نے یونیورسٹی کی لائبریری کا معائنہ کیا یونیورسٹی کے میڈیا اینڈ جرنلزم ڈیپارٹمنٹ میں یونیورسٹی ٹی وی اسٹو ڈیو کا باقاعدہ افتتاح کرتے ہوئے ٹی وی اسٹوڈیو کو عوامی شعور و آگہی کیلئے خوش آئند اقدام قرار دیا ۔ آخر میں گورنر نے اکیڈمک بلاک کا افتتاح بھی کیا ۔ 
()()()
خبرنامہ نمبر3390/2018
کوئٹہ 13دسمبر ۔بچے ہمارا مستقبل ہیں اور بچوں کے تحفظ کو ہر سطح پر یقینی بنانے کیلئے حکومت بلوچستان کا ایکٹ برائے تحفظ اطفال ایک اہم قدم ہے ۔ صوبائی حکومت بچوں کو ہرسطح پر تحفظ دینے کیلئے کوشاں ہے۔ محکمہ سماجی بہبود اس حوالے سے تحفظ اطفال کو یقینی بنانے کیلئے یونیسف کے تعاون سے کامیابی کی منزلوں کی طرف گامزن ہے ۔ ان خیالات کا اظہار سیکریٹری سماجی بہبود نور الحق بلوچ نے چائلڈ پرو ٹیکشن کے حوالے اقدامات کیلئے منعقدہ اجلاس میں کیا انہوں نے اس امر پر زور دیتے ہوئے کہا کہ بچے نہایت ہی نازک ہوتے ہیں ان کی آبیاری اور پرورش میں کوئی کمی نہیں ہونی چاہیئے ۔ حکومت بلوچستان یونیسف کے تعاون سے بچوں کے تحفظ کو ہر سطح پر یقینی بنا ئے گی ۔ اجلاس میں یونیسف کے نمائندوں کے علاوہ ہر شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والوں نے شرکت کی اور تمام اراکین نے بچوں کے تحفظ کے حوالے سے ہونے والے اقدامات کا خیر مقدم کرتے ہوئے اپنے تمام تر تعاون کی یقین دہانی کرائی۔ 
()()()

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Post comment