HomeNews10-05-2019 Friday (File No.1)

10-05-2019 Friday (File No.1)

10-05-2019 Friday (File No.1)

خبر نامہ نمبر 1663/2019
کوئٹہ 10مئی ۔ وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے کہا ہے کہ جن سیکٹرز نے صوبے کا مستقبل بنانا ہے آئندہ مالی سال میں ان پر زیادہ سرمایہ کاری کی جائے گی،شعبہ ماہی گیری بھی صوبے کے مالی وسائل میں اضافے کا بڑا ذریعہ بن سکتا ہے، ضرورت اس امر کی ہے کہ اس شعبہ کی ضروریات کو پورا کرتے ہوئے اسے جدید خطوط پر استوار کیا جائے جس کا فائدہ مقامی ماہی گیروں کو بھی پہنچے گا، ان خیالات کا اظہار انہوں نے محکمہ ماہی گیری کے محکمانہ امور اور آئندہ پی ایس ڈی پی میں اس شعبہ کے مجوزہ ترقیاتی منصوبوں کے جائزہ اجلاس میں کیا، چیف سیکریٹری بلوچستا ن ڈاکٹر اختر نذیر ، ایڈیشنل چیف سیکریٹری منصوبہ بندی وترقیات، سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو، سیکریٹری داخلہ، سیکریٹری خزانہ نے اجلاس میں شرکت کی، جبکہ سیکریٹری ماہی گیری نے اجلاس کو بریفنگ دی، انہوں نے بتایا کہ آئندہ مالی سال کی پی ایس ڈی پی کے لئے صوبے کے ساحلی علاقے میں چار لینڈنگ جیٹیوں کے قیام کے منصوبے تیار کئے گئے ہیں جبکہ ایک ہزار کشتیوں میں وی ایچ ایف سسٹم کی تنصیب کے ذریعہ ان کی ٹریکنگ کا منصوبہ بھی تیار کیا گیا ہے جس سے ایک جانب تو ماہی گیروں کی کشتیوں کی ٹریکنگ کے ذریعہ کسی بھی حادثے کی صورت میں فوری امداد ممکن ہوسکے گی تو دوسری جانب بلوچستان کے ساحلی علاقوں میں غیرقانونی ٹرالروں کے ذریعہ مچھلی کا شکار بھی روکا جاسکے گا، ٹریکنگ کے لئے کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر بھی قائم کیا جائے گا، وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ بلوچستان کے ماہی گیروں کی فلاح وبہبود اور مفادات کے تحفظ کے لئے فشر مین کوآپریٹیو سوسائٹی کے قیام کا جائزہ بھی لیا جائے اور سمندری ایمبولینس کی فراہمی اور لائیو گارڈز کی بھرتی کی ایس این بنائی جائے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1664/2019
کوئٹہ 10مئی ۔صوبائی مشیر کھیل و ثقافت عبدالخالق ہزارہ نے کہا ہے کہ جس ملک میں کھیلوں کے میدان آباد ہوتے ہیںوہاں پر ہسپتال ویران ہوجاتے ہیں اور ایسی سر گرمیوں سے ملک کی ترقی اور خوشحالی یقینی ہوتی ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے قیوم پاپا فٹبال اسٹیڈیم اور صفدر بابل ہاکی گراو¿نڈز کے دورہ کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر سیکریٹری کھیل احمد رضا خان اور ڈائریکٹر جنرل کھیل درابلوچ و دیگر انکے ہمراہ موجود تھے اس موقع پر صوبائی مشیر کھیل کا کہنا تھا کہ ماضی میں مذکورہ گراو¿نڈز کی مد میں کرپشن، تعمیر و مرمت کے کام میں تاخیر، غیرمعیاری اور ناقص میٹریل کے استعمال سے کھیل کے شعبے کو کافی نقصان اٹھانا پڑا فٹبال گراو¿نڈ میں کروڑوں روپے صرف ایک لیٹرین پر خرچ کئے گئے ۔کھلاڑیوں کے لئے گراو¿نڈز کے دروازے سازش کے تحت بند کردیے گئے تھے ہاکی گراو¿نڈ کے اسٹروٹرف کے لیے کروڑوں روپے جاری ہوئے مگر چند لاکھ کا غیر معیاری اسٹرو ٹرف خریدا گیا انہوں نے کہا کہ کھلاڑیوں کو کھیل سے دورکرکے ان کے مستقبل سے کھیلا گیا انہوں نے کہا کہ اب ایسا نہیں ہوگا ہم کسی کے ساتھ ناانصافی نہیں ہونے دیں گے موجودہ صوبائی حکومت کھیلوں کی بہتری کے لیے تمام دستیاب وسائل کو بروے کار لا رہی ہے انہوں نے سیکریٹری کھیل کو ٹھیکیدار اور متعلقہ حکام کو طلب کرنے اور جاری کام کی رپورٹ پیش کرنے کے احکامات جاری کیے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1665/2019
کوئٹہ10مئی :۔ وزیر اعلیٰ بلوچستان کے مشیر برائے ثانوی تعلیم میر محمد خان لہڑی نے کہا ہے کہ معاشرے کی تشکیل میں اساتذہ کا کردار نہایت اہمیت کا حامل ہے۔ اساتذہ سماجی ساخت کا اہم ستون ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ استاد کے احترام اور سماجی رتبے کی بحالی کے لیے کوشاں ہیں اساتذہ کی عزت و تکریم پر کوئی حرف نہیں آنے دیں گے۔ استاد کی عظمت ایمانداری نیک نیتی اور خلوص دل سے اپنی فرائض کی انجام دہی میں ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے نصیرآباد اور جھل مگسی سے آئے ہوئے اساتذہ کے نمائندہ وفود سے بات چیت کرتے ہوئے کیا جنہوں نے یہاں کوئٹہ میں ان سے ملاقات کی۔ صوبائی مشیر نے کہا کہ موجودہ حکومت اساتذہ کے مسائل سے بخوبی آگاہ ہے اور اساتذہ کرام کے تمام مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کئے جائیں گے انہوں نے کہا کہ حکومت تعلیم کے شعبے کی ترقی اور اساتذہ کے فلاح و بہبود کے لئے سنجیدہ اقدامات اٹھا رہی ہے۔ انہوں نے اساتذہ پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اساتذہ ایمانداری اور خلوص نیت سے اپنے فرائض سرانجام دیں اور غفلت کے مرتکب اساتذہ کی حوصلہ شکنی کریں۔ مشیر تعلیم نے کہا کہ مغرب آج ترقی کے منازل تیزی سے طے کررہا ہے کیونکہ انہوں نے خلوص نیت اور ایمانداری کو اپنا شعار بنایا ہوا ہے۔ وقت آگیا ہے کہ ہم بھی اپنے فرائض کا احساس کرتے ہوئے معاشرے کی تشکیل میں اپنا کردار ادا کریں۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1666/2019
نصیر آباد 10مئی:۔نصیرآباد میں آئی ٹی کے شعبے کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے لئے ڈویژنل اور ضلعی انتظامیہ متحرک ہو گئی آئی ٹی انسٹیٹیوٹ کے قیام کیلئے نصیرآباد میں دس ہزار فٹ اراضی مختص کر دی گئی اراضی پر محکمہ بی اینڈ آر کی جانب سے تعمیراتی کام شروع کر دیا گیا ان خیالات کا اظہار ڈویژنل ڈپٹی ڈائریکٹر آئی ٹی عبدالرحیم بلوچ نے انسٹیٹیوٹ کے جاری ترقیاتی کاموں کے جائزے کے موقع پر بات چیت کرتے ہوئے کیا عبدالرحیم بلوچ نے بتایا کہ نصیرآباد ڈویژن میں 2012 سے لے کر اراضی نہ ہونے کی باعث انسٹیٹیوٹ تعمیر نہیں ہو رہا تھا مگر کمشنر نصیرآباد ڈویژن جاوید اختر محمود اور ڈپٹی کمشنر نصیرآباد ظفر علی ایم شہی کی خصوصی دلچسپی کی بدولت نصیرآباد میں آئی ٹی کے لئے دس ہزار فٹ اراضی مختص کر دی گئی ہے جس پر محکمہ بی اینڈ آر کی جانب سے تعمیراتی کام کا آغاز کردیا گیا ہے انسٹی ٹیوٹ کے قیام کے بعد یہاں پر گورنمنٹ ملازمین سمیت دیگر افراد کو آئی ٹی کے کورسز کرائے جائیں گے اور انہیں آئی ٹی کے شعبے میں مہارت دی جائے گی تاکہ آگے چل کر وہ ملک کو قوم کی بہتر انداز میں خدمت کر سکیں نصیرآباد میں آئی ٹی انسٹیٹیوٹ کی تعمیر کے بعد یہاں پر آئی ٹی کے شعبے میں انقلاب برپا ہوگا جہاں پر میل اور فیمیل کو ٹریننگ دی جائے گی نصیرآباد میں آئی ٹی انسٹیٹیوٹ نہ ہونے کی وجہ سے ملازمین سمیت دیگر مختلف شعبہ زندگی سے وابستہ افراد بلوچستان کے دیگر علاقوں میں جاکر آئی ٹی کے کورس کرتے تھے انہیں بھاری بھرکم اخراجات کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا مگر اب وزیراعلی بلوچستان جام کمال خان اور کمشنر نصیرآباد کی خصوصی دلچسپی کے سبب یہاں پر آئی ٹی انسٹیٹیوٹ کی بلڈنگ کا کام زور شور سے جاری ہے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1667/2019
نصیر آباد 10مئی:۔نئے تعینات ہونے والے ڈائریکٹرلوکل گورنمنٹ نصیرآباد ڈویژن غلام سرورپندرانی نے اپنے عہدے کا چارچ سنبھال کر کام شروع کردیا اس موقع پرسٹاف نے اپنا تعارف کرایا ڈائریکٹرلوکل گورنمنٹ غلام سرورپندرانی نے تمام سٹاف پر زوردیا کہ اپنے فرائض منصبی احسن طریقے سے سرانجام دیں تاکہ بہتر اندازمیں عوام کی خدمت کی جاسکے ۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1668/2019
لورالائی10مئی ۔نابینا افراد کی فنی تعلیم اور تربیت کا خصوصی اہتمام کیا جا رہا ہے ۔نابینا افراد کو ہنر فراہم کرکے معاشرے کا باعزت شہری بنایا جائے گا۔ان خیالات کا اظہار ریکٹر بائٹمز(BIITEMS) انجینئرسیداورنگ زیب نے بلوچستان انسٹیٹیوٹ آف انفارمیشن ٹیکنالوجی اینڈمینجمنٹ سائنسسز لورالائی کے زیر اہتمام نابینا افراد کے لیے منعقدہ ٹریننگ کے شرکاءسے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ اس طرح کے کمپیوٹر پروگرام کے انعقاد کا مقصد نابیناافراد کو فنی آگاہی فراہم کرنا ہے تاکہ عام ادمی کو یہ باور کروایا جا سکے کہ بصارت سے محروم افراد بھی تھوڑی سی توجہ کے ساتھ معاشرے کے ذمہ دار اور مفید شہری ثابت ہو سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ قدرت جب کسی سے ایک نعمت لیتی ہے تو دیگر کئی صلاحتوں سے اس کو نواز دیتی ہے۔بظاہر بصارت سے محروم نظر انے والے لوگ باکمال چشم بصیرت رکھتے ہیں۔ان کے دل کی آنکھیں روشن اور دماغ انتہائی تیز ہوتا ہے۔ بلوچستان انسٹیٹیوٹ آف انفارمیشن ٹیکنالوجی اینڈمینجمنٹ سائنسسز لورالائی (بائٹمز)ان افراد کی صلاحیتوں کو استعما ل میں لا کر انہیں معاشرے کا اہم ستون بنانا چاہتاہے۔نابینا افرادکی معلومات تک بہتر رسائی کے لئے بلوچستان انسٹیٹیوٹ آف انفارمیشن ٹیکنالوجی اینڈمینجمنٹ سائنسسز لورالائی نے کمپیوٹر ٹریننگ کا انعقاد کیا ہے جس میں بارہ نابینا افراد شرکت کر رہے ہیں ۔ٹریننگ میں ان افراد کے لیے علیحدہ سوفٹ وئیر پر کام کرایا جا رہا ہے تاکہ معلومات تک رسائی میں کوئی مسئلہ در پیش نہ ہو۔انہوں نے کہا کہ موجودہ دور کمپیوٹر (انفارمیشن ٹیکنالوجی) کا ہے اس لئے بلوچستان انسٹیٹیوٹ آف انفارمیشن ٹیکنالوجی اینڈمینجمنٹ سائنسسز لورالائی کی ہمیشہ یہ کوشش رہی ہے کہ زندگی کے ہر شعبہ سے تعلق رکھنے والے افراد کو کمپیوٹر خواند ہ کیا جائے تاکہ مستقبل کے چیلنجز سے باآسانی نمٹا جا سکے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1669/2019
کوئٹہ 10مئی ۔ ڈپٹی کمشنر جعفر آباد کے ایک اعلامیہ کے مطابق احمد علی ولد لیاقت علی ذات کھوسہ پتہ بھگن بابا کالونی ڈیرہ اللہ یار جھٹ پٹ لوکل سرٹیفکیٹ نمبر 347/LC/GB تاریخ اجراء27فروری 2012 انکی اپنی درخواست پر منسوخ کیا جا تا ہے ۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1670/2019
کوئٹہ 10مئی ۔ ڈپٹی کمشنر کوئٹہ کے ایک اعلامیہ کے مطابق شوکت غوری ولد چوہدری رحمت ڈومیسائل سر ٹیفکیٹ نمبر 1444-5/59Citz تاریخ اجراء03 اکتوبر 2003 انکی اپنی درخواست پر منسوخ کیا جا تاہے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبر نامہ نمبر 1671/2019
کوئٹہ 10مئی ۔صوبائی مشیر ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ملک نعیم خان بازئی نے کہا ہے کہ فرض شناس اور ایمانداری کا مظاہرہ کرنے والے پولیس اہلکار دوسروں کیلئے مثال ہیں جنہوں نے اپنی ایمانداری کی وجہ سے اپنے محکمے کا نام روشن کیا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے موٹر وے پولیس کے انسپکٹرز محمد اکرم ترین اور عبدالرزاق کاکڑ کو اپنی جیب سے نقد انعام دینے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوںنے کہا کہ مذکورہ موٹر وے پولیس اہلکاروں نے فرض شناسی اور ایمانداری کا اعلیٰ مثال قائم کیا جوکہ ایک قابل تحسین عمل ہے موٹر وے پولیس جہاں ٹریفک کے نظام کو رواں دواں رکھنے کی دیکھ بھال کرتی ہے وہیں عوام کی جان ومال کی حفاظت اور نگرانی بھی کرتی ہے ان کی ایمانداری نے پولیس کی عزت بڑھادی ہے انہوںنے کہا کہ اس ایمانداری اور فرض شناسی پر دونوں انسپکٹرز کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں اور امید کرتے ہیں کہ موٹروے پولیس قوم و ملک کی خدمت کرتی رہے گی یاد رہے کہ دونوں انسپکٹرز موٹر وے پر پیٹرولنگ کررہے تھے کہ چلتی بس سے کوئٹہ چمن شاہراہ پر ایک مسافر کا لاکھوں کا قیمتی سامان گرا جسے ان دونوں نے بس کا پیچھا کرتے ہوئے اصل مالک کے حوالے کیا اس طرح کی فرض شناسی اور ایمانداری دوسروں کیلئے ایک مثال ہے جنہوں نے قابل تحسین عمل ہے ۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿

Share With:
Rate This Article

bk@gmail.com

No Comments

Leave A Comment