خبرنامہ نمبر1590/2019
کوئٹہ 04مئی :۔حکومت بلوچستان کے ترجمان لیاقت شاہوانی نے کہا ہے کہ وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کے وژن کے مطابق صوبے میں محکمانہ اور ادارتی اصلاحات کا عمل جاری ہے جس کا مقصد محکموں اور اداروں کی کارکردگی اور استعداد کار میں اضافہ کے ذریعے گورننس کی بہتری کے ساتھ ساتھ تمام شعبوں سے وابستہ عوام کو بہتر سہولتوں کی فراہمی ہے اپنے ایک بیان میں ترجمان نے کہاہے کہ وزیراعلیٰ کی جانب سے محکمہ ترقی خواتین کو صوبائی جینڈر اور وومن امپاورمنٹ پالیسی تشکیل دینے کی ہدایت کی گئی ہے تاکہ صوبے کی خواتین کو برابری کی بنیاد پر بااختیار بناکر سماجی و معاشی میدان میں ان کی صلاحیتوں سے استفادہ کیا جاسکے ا ور سول سوسائٹی تنظیموں نجی شعبوں میڈیا وترقیاتی شراکت داروں کے تعاون سے ہر سطح اور زندگی کے تمام شعبہ ہائے زندگی میں صنفی امتیاز کا خاتمہ ممکن ہوسکے و زیراعلیٰ بلوچستان نے سیکرٹری محکمہ ترقی خواتین کو مجوزہ پالیسی کے حوالے سے 7 جون کو پریزنٹیشن دینے کی ہدایت کی ہے صوبائی ترجمان نے مزید کہا ہے کہ وزیراعلیٰ کی جانب سے محکمہ کھیل کو جامع یوتھ پالیسی کی تشکیل بھی ہدایت کی گئی ہے۔پالیسی کا مقصد صوبے کے نوجوانوں کی کیریئر بلڈنگ ان کی صلاحیتوں میں اضافہ تعلیم صحت ثقافت اور یوتھ ڈویلپمنٹ جیسے امور کا احاطہ کرنا ہے وزیراعلیٰ کی جانب سے سیکریٹری محکمہ کھیل و امور نوجوانان کو 4 جون کو مجوزہ پالیسی پریزنٹیشن دینے کی ہدایت کی گئی ہے اسی طرح وزیراعلیٰ کی جانب سے محکمہ کھیل کو صوبائی اسپورٹس پالیسی کی تشکیل کی ہدایت بھی کی گئی ہے جس کا مقصد صوبے میں کھیلوں کی ترقی وترویج صحت کی سہولیات میں اضافہ اور مقامی کھیلوں کے انعقاد کے ذریعے انہیں ملکی وبین الاقوامی سطح پر متعارف کرانا ہے ترجمان کہا ہے کہ موجودہ صوبائی حکومت پہلی حکومت ہے جو وزیراعلی کی قیادت میں صوبے کی ترقی کیلئے دیرپا بنیاد دوں پر اقدامات کررہی ہے جن کے دور رس نتائج جلدعوام کے سامنے ہونگے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1591/2019
کوئٹہ 04مئی :۔بلوچستان ہائی کورٹ کے چیف جسٹس محترمہ سید ہ طاہر ہ صفدر صا حبہ نے گوادر کا دورہ کیا اور(Judicial Rest House)کاافتتاح کیا ۔اس موقع پر چیف جسٹس کے ہمراہ جسٹس نعیم اختر افغان ،جسٹس اطہیر الدین کاکڑ ،رجسٹر ار ہائی کورٹ روزی خان کاکڑ ،ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج (انسپکشن ) عبدالقیوم لہڑی صاحب ،سیشن جج گوادر طاہر ہمایوں صاحب ،اور ما تحت عدلیہ ڈسٹرکٹ گوادر بھی ہمراہ تھے ۔محترمہ چیف جسٹس نے کورٹ کمپلیکس کا معائنہ کیا اوراطمنیان کا اظہار کیا ۔اس کے بعد چیف جسٹس نے ڈسٹرکٹ کورٹ گوادر کا دورہ کیا اور وہاں پر ڈسٹرکٹ بار اسیو یشن گوادر کے ساتھ بار روم میں ملاقات کی ملاقات کے دوران محترمہ چیف جسٹس صاحبہ نے وکلا ءصاحبان کے مسائل سُنے اور کہا کہ وکلا ءکے ساتھ در پیش تمام مسائل زید غور لائے جائیں گے ساتھ ہی چیف جسٹس نے وکلاءسے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ چونکہ بار اور بینچ ایک دوسرے کے ساتھ مسلک ہیں ۔لہذا وکلاءاپنی محنت جاری رکھیں جس سے نہ صرف بار اور بینچ کے توقیرمیں اضافہ ہوگا بلکہ سائنس کو بھی انصاف فراہمی میں مشکلات دور ہونگی ۔ڈسٹرکٹ بار گوادر کے ممبران چیف جسٹس کا شکر یہ ادا کیااور اس کے اعزاز میں چائے پارٹی بھی دی محترمہ چیف جسٹس نے ڈسٹرکٹ کو رٹ گوادر کے بلڈنگ کا بھی معائنہ کیااور اس کے بعد گوادر ڈسٹرکٹ کے جو ڈیشل آفیسران سے ملاقات میں جج صاحبان کو محنت اور لگن سے کام جاری رکھنے کی تلقین کی ۔اس کے ساتھ ساتھ چیف جسٹس بلوچستان ہائی کورٹ کے ماتحت عدلیہ کے ججز صا ھبان سے اُن کو درپیش مسائل بھی سُنے اور رجسٹرارہائی کورٹ کو ہدایت کی کہ وہ جلد از جلد ان مسائل کو حل کرائے ۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1592/2019
کوئٹہ 04مئی :۔بلوچستان ہائی کورٹ کی چیف جسٹس محتر مہ سیدہ طاہر ہ صفدر نے گوادر ریسٹ ہاو¿ س کی عمارت 4کروڑ 26لاکھ روپے کی لاگت سے ہائی کورٹ ریسٹ ہاو¿س کا افتتاح کیا۔ اس موقع پر محکمہ مواصلات تعمیر ات کے صوبائی ایڈ وائیزر جبار خان نے ریسٹ ہاو¿س کے منصوبے کے متعلق تفصیلی بر یفنگ دی۔ ریسٹ ہاو¿س کی افتتاحی تقر یب میں بلوچستان ہائی کورٹ کے جسٹس صاحبان نعیم اختر افغان، ظہر الد ین کاکڑ، رجسٹرار ہائی کورٹ بلوچستان روزی خان بڑ یچ، انسپکشن جج ہائی کورٹ عبدالقیوم لہڑی، سیشن جج گوادر طاہر ہمایوں، سینئر سو ل جج گوادر محمد انور کاسی، جوڈ یشل مجسٹر یٹ گوادر غلام مصطفی رونجھو، جو ڈیشل مجسٹر یٹ جیونی بمقام گوادر فرمان اللہ، جوڈ یشل مجسٹر یٹ پسنی محمد وارث، ممبر مجلس شوریٰ گوادر سکندر علی زہری، ڈی آئی جی مکران منیر احمد ضیاءراو¿، ایس ایس پی گوادر نصیب اللہ، اے ڈی سی (جنرل) گوادر انیس طارق گورگیج، اے ڈی سی (ریو نیو) گوادر میجر ریٹائر ڈ فیاض علی، ڈسٹرکٹ پبلک پر اسیکوٹر گوادر الفت حسین، ڈسٹرکٹ اٹارنی گوادر عبدالغنی شاہ زہی، مکران کے معروف قانون دان عبدالحمید ایڈوکیٹ، گوادر بار کے صدر آ صف رحیم ایڈوکیٹ، جنرل سیکر یڑ ی طارق حسن دشتی، کیچ بار کے صدر جاڈین دشتی ایڈوکیٹ،ڈسٹرکٹ ایجو کیشن آ فیسر گوادر منیر احمد نو دزہی، ایم ایس ڈی ایچ کیو اسپتال گوادر ڈاکٹر عبدالطیف دشتی، چیف آفیسر بلد یہ گوادر ایاز گورگیج، سو شل آ فیسر گوادر عبیداللہ، سابقہ چیئر مین بلدیہ گوادر عابدرحیم سہرابی، سابقہ وائس چیئر مین بلد یہ گوادر حاجی مولا بخش سمیت افسران اور وکلاءکی بڑی تعداد شر یک تھی۔ بعدازاں چیف جسٹس بلوچستان ہائی کورٹ نے سیشن کورٹ گوادر کا معائنہ کیا جہاں پہنچنے پر پو لیس کے چاک و چوبند دستے نے ان کو گارڈ آ ف آنر پیش کیا۔ چیف جسٹس نے گوادربار میں وکلاءسے ملاقات اس موقع پر گوادر بار کے صدر آ صف رحیم ایڈ وکیٹ نے سپاسنامہ پیش کیا۔ وکلاءسے مختصر خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ آئین اور قانون کی بالادستی سمیت فوری اور سستے انصاف کی فراہمی کے لیئے بنچ اور بار کا کر دار اہم ہوتا ہے بلوچستان کی اعلیٰ عد لیہ او ر ضلعی عدالتیں لوگوں کو انصاف کی فراہمی کے لیئے اپنا کر دار ادا کر رہے ہیں۔ درایں اثناءچیف جسٹس نے ضلعی عدالتوں اور ان کے ریکارڈ کا بھی معائنہ کیا۔ چیف جسٹس نے جوڈیشل افسران کو زیر التوائ مقدمات کو فوری نمٹانے کی ہدایت کی۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1593/2019
کوئٹہ 04مئی :۔محکمہ تعلیم بلوچستان میں پندرہ ہزار نئی آسامیوں پر بھرتی کا عمل ایک ہفتہ کے اندر شروع کر دیا جائےگا، گریڈ 17 اور 16 کی 2200 خالی آسامیاں بلوچستان پبلک سروس کمیشن جبکہ گریڈ 9 سے 15 کی نو ہزار آسامیاں ٹیسٹنگ سروس اور کلاس فور کی 3500 آسامیاں محکمانہ کمیٹیوں کے ذریعے پر کی جائیں گی، صوبائی سیکریٹری تعلیم محمد طیب لہڑی نے کہا ہے کہ محکمہ تعلیم میں پہلی مرتبہ اتنی زیادہ خالی آسامیوں پر بھرتی کی جا رہی ہے ، یہ تمام بھرتیاں میرٹ کی بنیاد پر ہوںگی، انہوں نے کہا کہ نئی بھرتیوں کے بعد صوبے میں غیر فعال سکولوں کا مسئلہ حل ہو جائے گا اور تمام سکول فعال ہو جائیں گے۔سیکریٹری تعلیم نے کہا کہ صوبے میں غیر حاضر اساتذہ کے خلاف بھرپور انداز میں کاروائی عمل میں لائی جا رہی ہے، چھ سو اساتذہ کو غیر حاضری کی بنیاد پر معطل کیا جا چکا ہے جبکہ دو ہزار اساتذہ کے خلاف محکمانہ انکوائری کی جا رہی ہے، انہوں نے کہا کہ رواں سال بلوچستان بھر میں ساڑھے تین ہزار اساتذہ سرکاری ملازمت سے ریٹائر ہو جائیں گے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿

خبرنامہ نمبر 1594/2019
کوہلو04مئی :۔ڈپٹی کمشنر کوہلو عبداللہ خان کھوسہ نے گزشتہ روز اچانک ضلع کے مختلف سکولوں اور بنیادی مراکز صحت کا دورہ کیا اور ٹیچروں و ڈاکٹروںکی حاضریاں چیک کی ہیں اس موقع پر اُن کے ہمراہ حفیظ ،جعفرخان زرکون اورپی پی ایچ آئی کے ڈی ایس ایم رفیق بزدار موجود تھے اس دورے کے دوران کو ہلو کے شہری علاقے میں تین سکول بند ہونے پرڈی سی کوہلو محکمہ تعلیم کے آفیسروں پر شدید برہم ہوئے ہیں انہوں نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ شہری علاقے میں سکولوں کا بند ہونا اور فرنیچرز کا فقدان لمحہ فکریہ ہے انہوں نے کہا کہ ضلع کے مختلف علاقوں میں سکولوں اور ہسپتالوں کے میں دورے کا سلسلہ جاری رہے گا غیر حاضر ہونے والے عملے کے خلاف سخت کارروائی کریں گے ضلع میں محکمہ صحت اور پی پی ایچ آئی کے ہسپتالوں کی کارکردگی تسلی بخش ہے جس سے عوام مستفیدہورہے ہیں محکمہ تعلیم اور شعبہ صحت میں کسی قسم کی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1595/2019
خضدار 04مئی :۔کمشنر قلات ڈویژن حافظ طاہر نے کہا ہے کہ عوامی اسکیموں کی موئثر نگرانی کے لئے منظم لائحہ عمل تیار کرلیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ اجتماعی عوامی فوائد کی حامل اسکیمات ترجیحی بنیادوں پر مکمل کی جارہی ہے تاکہ عوام کو پینے کا صاف پانی صحت کی معیاری سہولتیں اور اعلیٰ معیاری تعلیم بہتر طریقے سے فراہم کی جاسکیں ان خیالات کا اظہار کمشنر قلات ڈویژن نے بلوچستان عوامی ترقیاتی پروگرام کے حوالے سے منعقدہ اجلاس سے خطاب کے دوران کیا اجلاس میں ڈی سی خضدار میجر (ر) محمد الیاس کبزئی ڈی سی مستونگ ممتاز احمد کھیتران ڈی سی قلات شہک بلوچ اے ڈی سی لسبیلہ فرہان سلیمان سپرنڈنٹ انجینیئر سی اینڈ ڈبلیوiiشفیع محمد مینگل اسسٹنٹ ڈائریکٹر لوکل گورنمنٹ عبدالقیوم عمرانی ڈائریکٹر ڈیولپمنٹ محمد صادق نوتانی ایس ڈی او سی اینڈ ڈبلیو قلات امیرالملک لانگو ایس ڈی او پی ایچ ای مستونگ ملک داد محمد علی اکبر بلوچ عبدالحفیظ جتک و دیگر نے شرکت کی ڈی سی خضدار میجر (ر) محمد الیاس کبزئی نے بریفنگ میں بتایا کہ ضلع خضدار میں مختلف اسکیمات پر کام تیزی سے جاری ہے جن میں چند اسکیمات تکمیل کے آخری مراحل میں ہیں جب کہ بہت ساری اسکیمات پر کام تیزی سے جاری ہے جو عنقریب مکمل کرلی جائیگی جن اسکیمات پر کام جاری ہے وہ عوامی ہیں انشاءاللہ ان اسکیموں کے ثمرات بہت جلد عوام کو مل جائیں گے کمشنر قلات ڈویژن حافظ طاہر نے کہا کہ ان اسکیمات کے لئے فراہم کردہ فنڈز عوام کی امانت ہے تمام متعلقہ محکموں کے سربراہان کام کے معیار کو برقرار رکھتے ہوئے بروقت اسکیمات کو اپنی نگرانی میں مکمل کرانے کی کوشش کریں اور وقتا فوقتا اسکیمات پر ہونے والے کام کا خود معائنہ کریں اور اسکیمات میں استعمال ہونے والے تعمیراتی مٹیریل پر بھی کڑی نظر رکھیں غیر معیاری مٹیریل استعمال کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کریں تاکہ رقوم ضائع ہونے سے بچائی جاسکیں انہوں نے کہا کہ کسی اعلیٰ شخصیت کو خوش کرنے یا کسی کو ذاتی فوائد پہنچانے والی اسکیمات منظور کرنے کے بجائے ایسی اسکیمات کی منظوری دیں جس سے علاقے کے زیادہ سے زیادہ عوام مستفید ہوسکیں ۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1596/2019
کوئٹہ 04مئی :۔بلوچستان خصوصا”مہرگڑہ انسانی تہذیب و تمدن کے حوالے سے امام کی حیثیت رکھتا ہے۔دنیا کی قدیم تہذیبوں میں مہرگڑہ اور فلسطین میں جیرینکو سب سے قدیم انسانی سرگرمی کے نشان ہیں مگر مہرگڑہ کو یہ سبقت حاصل ہے کہ یہاں انسان نے باقائدہ تمدنی زندگی کی بنیاد رکھی اور زراعت کے ساتھ ساتھ جانوروں کو پالتو بنانے کا باقائدہ آغاز کیا اور اضافی زرعی پیداوار کو جمع کرکے محفوظ رکھنے کی ابتدا کی۔مہر گڑہ اس حوالے سے بھی جیرینکو سے آگے ہے کہ مہرگڑہ کی تہذیب میں انسانی سرگرمی جدید سائنسی انداز سے تھی اور وہ اپنے ہز اروں سالوں کے تسلسل کو برقرار رکھ سکی۔ان خیالات کا اظہار ممتاز دانشور و ادیب ایوب بلوچ نے انٹیٹیوٹ آف بلوچستان اسٹڈیز کے زیر اھتمام ایک توسیعی لیکچر کے موقع پر کیا۔صوبائی سیکریٹری ثقافت و آثار قدیمہ ظفر علی بلیدی مہمان خصوصی تھے۔ایوب بلوچ نے کہاکہ بلوچستان میں ہر طرف بکھرے ثقافتی آثار کی حفاطت اس وقت ممکن ہے جب عام آدمی ان آثار کو اپنی وراثت کے طور پر قبول کرے اور اس کی حفاظت کا بیڑا اٹھائے۔اس سلسلے میں ایک آگاھی مہم اور تسلسل کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا میں مہرگڑہ کی قدامت اور مستند حیثیت کے بارے میں کوئی ابہام موجود نہیں صرف ھم ہی ہیں جنہیں ھماری تاریخ کے ان مدفون خزانوں کی اھمیت کا احساس نہیں۔انہوں نے کہا کہ فرانسیسی ٹیم جس کے سربراہ مسٹر جیریج تھے مہرگڑہ کے بارے میں ان کی سائنسی کھوج اور دریافت سے پہلے یہ سمجا جا رہا تھا کہ بلوچستان میں پائے جانے والے آثار انڈس سولائزیشن کا تسلسل ہیں مگر مہر گڑہ کی دریافت کے بعد بلوچستان ثقافتی تناظر میں بہت آگے نکل گیا ہے۔سیکریٹری ثقافت و آثار قدیمہ میر ظفر علی بلیدی نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت بلوچستان صوبے کی آثار قدیمہ کی حفاظت اور دیکھ بھال کے لئے عملی اقدامات کر رہی ہے۔بلوچستان یونیورسٹی کے تعاون سے صوبے میں جدید میوزیم کے قیام کا کام جلد مکمل کیا جا رہا ہے۔اس کے علاوہ آثار قدیمہ کے تحفظ کے لئے ایک منصوبہ پر عمل درآمد کیا جا رہاہے۔ حکومت سندھ کے تعاون سے بلوچستان کے مختلف علاقوں سے کھدائی کے دوران برآمد ہونے والی نوادرات جو محکمہ سندھ کے پاس تھیں انھیں بلوچستان لایا جا چکا ہے۔سائنسی عمل کے بعد انہیں مختلف میوزیمز میں سجایا جائے گا۔اس موقع پر مختلف سوالات کے جوابات بھی دیئے گئے۔تقریب میں نورخان محمد حسنی۔سرور جاوید۔محمد نسیم لہڑی۔ وحید زھیر۔یار جان بادینی۔ڈاکٹر علی دوست بلوچ۔اور دیگر احباب اور طلباءنے شرکت کی۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1597/2019
زیارت 04مئی :۔معےاری تعلےم کے بغےر جدےددور کے چےلنجز کا مقابلہ نہیں کےا جاسکتا،معےاری تعلےم کو فروغ دےنا موجودہ حکومت کی اولےن ترجےح ہے ،تعلےم اےک اہم شعبہ ہے اس پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرےں گے ،اساتذہ اپنے فرائض منصبی اےماندار ی سے ادا کرےں ،گھر بےٹھے اساتذہ کو تنخواہ نہیں ملے گی ان خےالات کا اظہار صوبائی وزےر پی اےچ ای،واسا حاجی نورمحمد دمڑ ،ڈی سی زےارت قادر بخش پرکانی ،ڈی ای او لطےف اللہ غرشےن ،غلام رسول کاکڑ ،شمس الدےن ،علاوالدےن ،امےر محمد طوفان ،محمد نوردمڑ ،نجم الدےن ثاقب نے محکمہ تعلےم زےارت کے زےر اہتمام تعلےم کے فروغ کے سلسلے میں سےمےنار سے خطاب کرتے ہوئے کےا۔اس موقع پر حاجی عبدالجلےل دمڑ ،ملک گل رنگ عیسیٰ خےل ،ملک بڈو ،عبدالستار کاکڑ امان اللہ سارنگزئی بھی مو جود تھے ۔صوبائی وزےر حاجی نور محمد دمڑ نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ اساتذہ قوم کے معمار ہیں وہ نوجوان نسل کو اچھی تعلےم اور تربےت فراہم کرےں اور جدےد دور کے تقاضوں سے ہم آہنگ کرےں۔انہوںنے کہا تعلےم ےافتہ اقوام دنےا پر حکمرانی کررہی ہے ،دنےامیںجن قوموں کی ترقی کی منازل طے کی ہے وہ تعلےم ہی کی بدولت بلند مقام حاصل کرچکے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اساتذہ اپنی کارکردگی میں مزےد بہتری لائیں اس سلسلے میں ہر تےن مہینے بعدپروگرام منعقد کرےں گے جس میں بےسٹ ٹےچرز اور بےسٹ سٹوڈنٹ کا انتخاب کرکے تےن ،تےن لاکھ روپے بےسٹ ٹےچرز اور بےسٹ سٹوڈنٹ کو دےں گے ۔صوبائی وزےر نے اساتذہ کے لےے بس دےنے کابھی اعلان کےا اور سےمےنار میں بہتر کارکردگی دکھانے پر گورنمنٹ ہائی اسکول چےنہ زےارت کے طلباءکے لےے تےس ہزار روپے نقد رقم دےنے کا اعلان کےا۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1598/2019
زیارت 04مئی :۔صوبائی وزےر پی اےچ ای، واسا حاجی نورمحمد خان دمڑ کی زےر صدارت ضلع زےارت کے تمام محکموں کے افسران کا اجلاس منعقد ہوا،اجلاس میں تمام محکموں کے افسران نے صوبائی وزےر کو محکمانہ برےفنگ دی۔ اس موقع پر ڈپٹی کمشنر قادر بخش پرکانی ،اسسٹنٹ کمشنر زےارت کبےر زرکون اسسٹنٹ کمشنر سنجاوی عبدالمجےد سرپرہ بھی موجود تھے ۔اجلاس سے صوبائی وزےرحاجی نور محمد دمڑ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ افسران عوام کے خادم ہیں ،افسران حاکم نہیں بلکہ خادم بن کے کام کرےں،کام نہ کرنے والے افسران کی کوئی ضرورت نہیں،افسران دفتر وں کے ساتھ فےلڈ میں جاکر عوام کے مسائل حل کرےںاور افسران اےمانداری سے کام کرتے ہوئے عوام کی خدمت کو شعار بنائیں ،اپنی ڈےوٹی میں غفلت اور لاپرواہی اور عوامی شکاےات پر کاروئی کرےں گے۔انہوں نے کہا افسران اپنے متعلقہ محکموں کو مزےد فعال کرنے کے لیے ہر اول دستے کا کردار ادا کرےں ۔انہوں نے افسران کو ہداےت کی ضلع زےارت میں جاری ترقےاتی کاموں کو بروقت مکمل کےا جائے ۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
خبرنامہ نمبر1599/2019
کوئٹہ 04مئی :۔ایڈیشنل انسپکٹر جنرل پولیس بلوچستان جہانزیب خان جوگیزئی نے کہا ہے کہ بلوچستان پولیس عوام کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے اپنا بھرپور کردار ادا کر رہی ہے وائرلیس اور ٹیلی گرافی آپریٹر اور ریڈیو مکینک اہلکار اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے فرائض منصبی احسن طریقے سے نبھاتے ہوئے اپنی دماغی جسمانی صلاحیتوں میں نکھار پیدا کرکے بہتر طور پر صوبے کی خدمت کو بہتر بنا سکتے ہیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے وائرلیس اور ٹیلی گرافی آپریٹر اور ریڈیو مکینک کی 71 ویں پاسنگ آٹ پریڈ کے دوران خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر ایس ایس پی وائرلیس و ٹیلی جعفر خان کمانڈنٹ پولیس ٹریننگ کالج سلیم لہڑی ڈی آئی جی وزیر خان ناصر ایس ایس پی ہیڈ کوارٹر عبدالحلیم سمیت دیگر آفیسران بھی موجود تھے ایڈیشنل آئی جی جہانزیب جوگیزئی نے کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ پولیس اہلکاروں کو درپیش مسائل اور مشکلات کے حل کے لئے تمام دستیاب وسائل بروئے کار لاتے ہوئے انہیں سہولیات فراہم کریں تاکہ وہ اپنے فرائض کی بجا آوری لاتے ہوئے عوام کے جان و مال کے تحفظ کو احسن طریقے سے یقینی بناتے ہوئے ذمہ داری نبھائیں انہوں نے کہا کہ پاسنگ آوٹ پریڈ میں 47 ریکروٹس اپنی صلاحیتوں میں مزید نکھار پیدا کرنے کے لئے ورزش کو روزانہ کو مامور بناتے ہوئے اپنی پڑھائی جاری رکھ کر دماغی صلاحیتوں میں مزید بہتری لائیں انہیں جو ذمہ داری سونپی گئی ہے وہ احسن طریقے سے نبھا کر صوبے اور عوام کی خدمت کو یقینی بنا سکتے ہیں اس موقع پر ایس ایس پی ٹیلی جعفر خان نے سپاسنامہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ وائرلیس ٹیلی گرافی آپریٹر اور ریڈیو مکینک کی پہلی بار پاسنگ آ?ٹ پریڈ منعقد کی گئی ہے وائرلیس ٹریننگ سکول میں 50 اہلکاروں کو مختلف ٹریڈ کی تربیت دینے کی سہولت موجود ہے موجودہ سیشن میں 47 ریکروٹس پاس ہوئے ہیں انہوں نے بتایا کہ 1971 میں پولیس وائرلیس ٹریننگ سکول کی بنیاد رکھی گئی اور بعد ازاں 1983 میں آئی جی پولیس کے احکامات کی روشنی میں یہ سکول باقاعدہ منظور ہو کر وائرلیس ٹریننگ سکول کے نام سے منسلک ہوگیا انہوں نے کہا کہ اس سے قبل پولیس ٹیلی کمیونیکیشن بلوچستان کے ملازمین مختلف کورسز کے لئے لاہور بہاولپور اور کراچی جاتے تھے ان کی تربیت پر خطیر رقم خرچ کرنا پڑتی تھی مذکورہ پولیس وائرلیس ٹریننگ سکول جدید ٹرینرز اور سہولیات سے آراستہ ہے انہوں نے کہا کہ ادارہ ہذا کو مختلف مسائل درپیش ہیں پولیس گرائمر سکول کے چار کمرے ہمیں دیئے گئے جہاں پر اسٹینڈنگ آرڈر 2019 کے تحت کمپیوٹر لیب قائم کی جانی تھی وار وائرلیس پریکٹیکل روم اسٹاف روم اور وائس پرنسپل کا دفتر بھی بننا تھا کمروں کی کمی اور کمپیوٹر نہ ہونے کی وجہ سے کمپیوٹر کی کلاسز شروع نہ ہوسکی لیکن ہم نے اپنے وسائل میں رہتے ہوئے کمپیوٹر کی آگاہی دی ہے اسٹیشنری کی مد میں ملنے والے ڈھائی لاکھ روپے کا فنڈ ناکافی ہے اس کو بڑھا کر چار لاکھ کیا جائے پولیس ٹیلی کمیونیکیشن کے تمام پیغامات کا نظام سگنل سٹیشنری پر منحصر ہے اس کے چارجز کی مد میں 40 ہزار روپے مل رہے ہیں انہیں بڑھا کر پانچ لاکھ روپے کیا جائے اور بلڈنگ فنڈ بھی ناکافی ہے بلوچستان میں وائرلیس اسٹیشنوں میں جہاں پر نفری رہائش پذیر ہے ان کی نا گفتہ بہ ہے اس کی تعمیر و مرمت کے لئے فنڈز درکار ہے پولیس ٹیلی کمیونیکیشن کے ملازمین جو دیگر یونٹوں میں ہے ان کو واپس کیا جائے سی پی او سے 2013 میں ہیڈ کانسٹیبل کی 20 سیٹیں مس پرنٹ ہونے کی وجہ سے ایڈمنسٹریٹو اپرول کی غلطی سے ضلع پشین منتقل ہوگئی تھی خط و کتابت کے باوجود وہ واپس نہیں ہوئی انہیں واپس کیا جائے سٹیڈنگ آرڈر 2019 کے مطابق تمام پروموشنل کورسز پولیس وائرلیس ٹریننگ سکول میں کوئٹہ میں کرانے کے لئے موجودہ سہولیات ناکافی ہیں آئی جی پولیس بلوچستان کی جانب سے ٹیلی ہیڈ کوارٹر کے دورے کے موقع پر ایک ڈبل ڈور پک اپ ایک سنگل کیبن ایک ایمبولینس اور 25 موٹر سائیکلیں دینے کے احکامات صادر کئے گئے جن پر تا حال عملدرآمد نہیں ہوسکا اس موقع پر ایڈیشنل آئی جی پولیس بلوچستان جہانزیب جوگیزئی نے تربیت کے دوران پوزیشن حاصل کرنے والے اہلکاروں میں نقد انعام اور تعارفی سرٹیفکیٹ دیئے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
پریس ریلیز
کوئٹہ 04مئی :۔وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے صوباءوزیر صحت میر نصیب اللہ مری کے والد میر نور احمد مری کے انقال پر دکھ اور افسوس کا اظہارکرتے ہو ئے کہا ہے کہ مرحوم ایک مخلص اور نفیس انسان اور معتبر قبائلی شخصیت تھے جنہوں نے اپنے علاقے کی ترقی کے لئے قابل قدر خدمات انجام دیں۔وفات کی اطلاع ملنے پر وزیراعلیٰ کوئٹہ میں صوبائی وزیر کی رہائیش گا ہ پر گئے اور ان سے انکے والد کی وفات پر ہمدردی اور تعزیت کا اظہار کیااورمرحوم کی مغفرت اور سوگوار خاندان کے لئے صبر جمیل کی دُعا کی۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
پریس ریلیز
کوئٹہ 04مئی :۔صوبائی وزیر داخلہ و پی ڈی ایم اے میر ضیاءاللہ لانگو نے صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ مری کے والد بزرگ قبائلی رہنما میر نور احمد مری کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے دعا کی ہے کہ اللہ تعالیٰ مرحوم کو اپنی جوار رحمت میں جگہ عنایت فرمائے اور پسماندگان کو یہ صدمہ صبر اور ہمت سے برداشت کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
پریس ریلیز
کوہلو04مئی :۔ صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ خان مری کے والد اور قبائلی رہنماءمیر نور احمد بجارانی مری قضائے الٰہی سے انتقال کرگئے ہیں جو کافی عرصے سے علیل تھے اُن کی میت کوہیلی کاپٹر کے ذریعے کوئٹہ سے آبائی علاقے کوہلو پہنچا دیا گیا ہے جہاں ہفتہ کی شام اُن کی نماز جنازہ اور تدفین مارواڑ قبرستان میں کی گئی ہے جس میںصوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ مری،ڈپٹی کمشنر کوہلو عبداللہ کھوسہ،کمانڈنٹ ایف سی میوند رائفل ہمایوں اسلم ، ونگ کمانڈر کرنل محمد حماد و دیگرسرکاری آفیسران ،قبایلی عمائدین اور ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی ہے صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ خان مری اور میر نثار احمد مری آج بروز اتوار سے کوہلو میںکلی میر نوراحمد میں فاتحہ لیں گے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿
پریس ریلیز
کوئٹہ 04مئی :۔صوبائی وزیر اطلاعات و خزانہ ظہوراحمدبلیدی نے صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ مری کے والد میر نور احمد مری کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہارکیا ہے۔صوبائی وزیر میر نصیب اللہ مری کے نام اپنے تعزیتی پیغام میں ظہور احمد بلیدی نے کہا کہ اللہ مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور انکے اہل خانہ کو یہ عظیم صدمہ برداشت کرنے کی ہمت دے۔
﴾﴿﴾﴿﴾﴿

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Post comment